اہم خبریںپنجاب

راولپنڈی(افتخار خٹک سے )راولپنڈی کی سینٹرل جیل اڈیالہ میں انتظامیہ کے مبینہ تشدد سے 23

راولپنڈی(افتخار خٹک سے )راولپنڈی کی سینٹرل جیل اڈیالہ میں انتظامیہ کے مبینہ تشدد سے 23 سالہ نوجوان جان کی بازی ہار گیا متوفی کو جب ہسپتال منتقل کیا گیا تو اس کے جسم پر وحشیانہ تشدد کے نشانات تھے نوجوان کے لواحقین نے جیل انتظامیہ پر موت کی ذمہ داری عائد کرتے ہوئے جمعرات کے روزتھانہ سول لائن کے سامنے زبردست احتجاج کیااطلاعات کے مطابق تھانہ پیرودھائی کے علاقے گلی لوہاراں کا 23سالہ ایاز ڈکیتی کے مقدمہ میں نامزد ہونے کی بنا پراڈیالہ جیل میں حوالاتی تھا بدترین تشدد کیا گیاجسے تشویشناک حالت میں ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال منتقل کیا گیا تاہم وہ جانبر نہ ہوسکا نوجوان کی المناک موت پر اس کے لواحقین نے تھانہ سول لائن کے باہر زبردست احتجاج کیا متوفی کے بھائی کے مطابق اس کے بھائی پر اڈیالہ جیل میں وحشیانہ تشدد کیا گیاجس سے اس کی موت واقع ہوئی لواحقین کے مطابق متوفی کے پورے جسم پر وحشیانہ تشدد کے نشانات تھے لواحقین نے جیل انتظامیہ کے خلاف شدید نعرہ بازی کرتے ہوئے واقعہ کی غیر جانبدارانہ تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے ملزم کے لواحقین نے موت کی جوڈیشل انکوائری کا مطالبہ کرتے ہوئے زور دیا ہے کہ ملزم کی موت کی وجہ کے تعین کے لئے جوڈیشل افسر کا تقرر کیا جائے اس موقع پراے ایس پی سول لائن انعم شیر اور اے ایس پی نیو ٹاؤن ماہم موقع پر پہنچ گئیں جنہوں نے متاثرین کو میرٹ پر تحقیقات کی یقین دہانی کرائی پولیس کے ساتھ مذاکرات کے بعدمظاہرین پرامن طور پر منتشر ہو گئے ادھر ہسپتال انتظامیہ کا موقف تھا کہ ایازنامی ملزم کوبدھ کی رات جب ہسپتال لایا گیا تو اس کی موت واقع ہوچکی تھی اورابتدائی معائنے میں زخم یا تشدد کے نشانات نہیں ملے البتہ تشدد کے حوالے سے حتمی رائے پوسٹ مارٹم رپورٹ کے بعد قائم کی جائے گی اڈیالہ جیل حکام کے مطابق جیل میں طبعی موت کا شکار ہونے والے ایاز خان کورواں سال 11 اکتوبرکو اڈیالہ جیل منتقل کیا گیاجس کے خلاف تھانہ پیرودھائی میں ڈکیتی کی دفعہ392کے تحت درج مقدمہ نمبر 1131کے علاوہ چوری اور ڈکیتی کے 17مزید مقدمات درج ہیں جیل انتظامیہ کے مطابق بیماری کی وجہ سے ملزم19نومبر سے جیل ہسپتال میں زیر علاج تھا جبکہ23نومبر کو جاں بھق ہو گیااس کے باوجود ملزم کی موت کی جوڈیشل انکوائری کے لئے ڈسٹرکٹ اینڈسیشن جج کو خط لکھ دیاگیا ہے تاکہ ملزم کی موت کی وجہ کے تعین کے لئے جوڈیشل افسر کا تقرر کیا جاسکے۔

MKB Creation

Mehr Asif

Chief Editor Contact : +92 300 5441090

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

MKB Creation
Back to top button

I am Watching You